امریکی صدر ٹرمپ عالمی ادارہ صحت پر برہم ہوگئے، فنڈنگ روکنے کی دھمکی دے دی

امریکی صدر ٹرمپ عالمی ادارہ صحت پر برہم ہوگئے، فنڈنگ روکنے کی دھمکی دے دی


امریکی صدر ٹرمپ عالمی ادارہ صحت پر برہم ہوگئے، فنڈنگ روکنے کی دھمکی دے دی

واشنگٹن(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے عالمی ادارہ صحت پر چین کی جانب داری کا الزام عائد کرتے ہوئے اس کی فنڈنگ روکنے کی دھمکی دے دی۔ میل آن لائن کے مطابق صدر ٹرمپ نے گزشتہ روز ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے اور پھر اپنے ٹوئٹر اکاﺅنٹ کے ذریعے بھی اقوام متحدہ کی ہیلتھ باڈی ’ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن‘ (عالمی ادارہ صحت)کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا۔ ان کا کہنا تھا کہ کوروناوائرس کے معاملے پر عالمی ادارہ صحت غیرضروری طور پر چین کی طرف داری کر رہا ہے۔ ادارے کی طرف سے کورونا وائرس کا پھیلاﺅ روکنے کے متعلق فیصلوں اور عملی اقدامات میں بہت تاخیر کی گئی جس کی وجہ سے یہ عالمی وباءاس قدر سنگین ہو گئی۔

رپورٹ کے مطابق کنزرویٹو پارٹی کے کئی دیگر لوگ پہلے ہی الزام عائد کر رہے تھے کہ عالمی ادارہ صحت کورونا وائرس کے معاملے پر ’کوور اپ‘ (Cover up)کرنے میں چین کی مدد کر رہا ہے۔ اب صدر ٹرمپ بھی اسی ڈگر پر چلتے ہوئے عالمی ادارہ صحت پر برس پڑے۔ وائٹ ہاﺅس میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے ان کا کہنا تھا کہ ”عالمی ادارہ صحت نے کورونا وائرس کی وباءکو سمجھنے میں غلطی کی۔ انہوں معلوم ہونا چاہیے تھا اور غالباً انہیں معلوم تھا کہ یہ وباءاتنی سنگین ہو جائے گی۔“

صدر ٹرمپ نے اس دوران اس شبے کا اظہار کیا کہ عالمی ادارہ صحت نے کورونا وائرس سے متعلق معلومات چھپا کر رکھیں، جس کی وجہ سے امریکہ اور دیگر ممالک بروقت اقدامات نہ کر سکے۔ان کا کہنا تھا کہ ”اس صورتحال کو مدنظر رکھتے ہوئے عالمی ادارہ صحت کے فنڈز منجمد کیے جا سکتے ہیں۔ ادارے کی طرف سے تجویز دی گئی تھی کہ ہم چین کے لیے اپنے بارڈر کھلے رکھیں، جو خوش قسمتی سے میں نے مسترد کر دی۔ انہوں نے ہمیں ایسی غلط تجویز کیوں دی تھی؟“واضح رہے کہ امریکہ میں اب تک کورونا وائرس کے 4لاکھ سے زائد مریض سامنے آ چکے ہیں اور 12ہزار 876سے زائد اموات ہو چکی ہیں۔

مزید : بین الاقوامی



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے