بھارت میں انتہا پسندوں نے کورونا وائرس کو مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا بہانہ بنالیا، انتہائی افسوسناک خبر آگئی

بھارت میں انتہا پسندوں نے کورونا وائرس کو مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا بہانہ بنالیا، انتہائی افسوسناک خبر آگئی


بھارت میں انتہا پسندوں نے کورونا وائرس کو مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا بہانہ …

بھارت میں انتہا پسندوں نے کورونا وائرس کو مسلمانوں کو نشانہ بنانے کا بہانہ بنالیا، انتہائی افسوسناک خبر آگئی

  

نئی دہلی(مانیٹرنگ ڈیسک) بھارت میں انتہاءپسند ہندوﺅں نے مسلمانوں کو نشانہ بنانے کے لیے اب کورونا وائرس کو بہانہ بنا لیا۔ نیویارک ٹائمز کے مطابق انتہاءپسند ہندو بھارت میں ہونے والے مسلمانوں کے ایک اسلامی اجتماع پر کورونا وائرس پھیلانے کا الزام عائد کرکے مسلمانوں پر حملے کر رہے ہیں۔ گزشتہ روز چند نوجوان مسلمان لاک ڈاﺅن کے دوران غریبوں میں کھانا تقسیم کرنے کے لیے لیجا رہے تھے کہ راستے میں انتہاءپسند ہندوﺅں نے ان پر حملہ کر دیا۔ انہیں کرکٹ کے بلوں سے بہیمانہ تشدد کا نشانہ بنایا گیا ۔ انتہاءپسند ہندوﺅں نے مسلمان نوجوانوں کو ادھ موا کرکے چھوڑا اور چلے گئے۔

مسلمانوں پر اسی طرح کے حملوں کے کئی واقعات پیش آ رہے ہیں جن میں اب تک درجنوں مسلمان شدید زخمی ہو کر ہسپتال پہنچ چکے ہیں۔ لاک ڈاﺅن کے دوران بھارت میں دیگر نوعیت کے پرتشدد واقعات بھی پیش آ رہے ہیں۔ پنجاب میں کچھ سکھ نوجوانوں نے ایک پولیس سب انسپکٹر کا ہاتھ ہی کاٹ ڈالا، جس نے انہیں سے سفری کاغذات طلب کیے تھے۔ رپورٹ کے مطابق 7نوجوان ایک گاڑی میں جا رہے تھے۔ انہیں راستے میں سب انسپکٹر ہرجیت سنگھ نے روکا اور کاغذات طلب کیے جس پر ان میں سے ایک نے تلوار نکالی اور ہرجیت سنگھ کا ہاتھ کاٹ ڈالا۔ ہرجیت سنگھ کو فوری طور پر ہسپتال پہنچایا گیا جہاں 7گھنٹے طویل آپریشن میں اس کا ہاتھ دوبارہ اس کے بازو کے ساتھ جوڑ دیا گیا۔ واضح رہے کہ بھارت میں طویل لاک ڈاﺅن جاری ہے۔ اس کے باوجود وہاں کورونا وائرس کے مریضوں کی تعداد بڑھتے ہوئے 9ہزار 152تک جا پہنچی ہے اور اب تک اس موذی وباءسے 308اموات ہو چکی ہیں۔

مزید : بین الاقوامی



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے