’میں اس طرح ظاہر کرتی ہوں جیسے میرے شوہر کی جانب سے ہوا کا اخراج دراصل میرے فون کی وائبریشن ہے‘ لاک ڈاﺅن میں پھنسے جوڑوں کی دلچسپ کہانیاں

’میں اس طرح ظاہر کرتی ہوں جیسے میرے شوہر کی جانب سے ہوا کا اخراج دراصل میرے فون کی وائبریشن ہے‘ لاک ڈاﺅن میں پھنسے جوڑوں کی دلچسپ کہانیاں


’میں اس طرح ظاہر کرتی ہوں جیسے میرے شوہر کی جانب سے ہوا کا اخراج دراصل میرے …

’میں اس طرح ظاہر کرتی ہوں جیسے میرے شوہر کی جانب سے ہوا کا اخراج دراصل میرے فون کی وائبریشن ہے‘ لاک ڈاﺅن میں پھنسے جوڑوں کی دلچسپ کہانیاں

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) لاک ڈاﺅن کے ان دنوں میں میاں بیوی کو ہمہ وقت اکٹھے رہنے کا موقع مل رہا ہے، اور شاید زندگی میں پہلی بار یہ ہو رہا ہے۔ لاک ڈاﺅن کے ابتدائی دن تو میاں بیوی بہت خوش رہے ہوں گے لیکن بالآخر اکتاہٹ ان پر حاوی آ رہی ہے اور چھوٹی چھوٹی باتوں پر نوک جھونک شروع ہو چکی ہے۔ میگ زوکین نامی ایک خاتون نے ایک انسٹاگرام اکاﺅنٹ بنایا ہے جس پر وہ لاک ڈاﺅن میں پھنسے جوڑوں کی دلچسپ کہانیاں ڈھونڈ ڈھونڈ کر پوسٹ کر رہی ہے۔ اس اکاﺅنٹ پر میگ نے ایک خاتون کی کہانی بیان کی۔ اس خاتون نے بتایا کہ میری شادی کو پانچ سال ہو گئے ہیں اور میں نے اپنے شوہر کے ساتھ ان پانچ سالوں میں اتنا وقت نہیں گزارا تھا جتنا اس لاک ڈاﺅن میں گزار رہی ہوں۔ میں اس کے جسم سے ہوا خارج کرنے کے عمل سے اس قدر تنگ آ چکی ہوں کہ اب میں اپنے آپ کو یہ تسلی دے کر مطمئن کر لیتی ہوں کہ یہ اس کے جسم سے ہوا خارج نہیں ہوئی بلکہ میرے فون پر وائبریشن ہوئی ہے۔ اگر میں خود کو یہ تسلی نہ دیتی تو شاید میں اس سے علیحدہ ہو چکی ہوتی۔

ایک اور لڑکی نے بتایا کہ ”لاک ڈاﺅن نے مجھے میری چڑچڑی ماں جیسا بنا دیا ہے جو ہر بات پر سوال پوچھتی رہتی ہے۔ ان دنوں میں بھی اپنے بوائے فرینڈ سے ہر بات پوچھ رہی ہوں۔ جوناتھن، بستر میں بل کیوں پڑے ہیں۔ جوناتھن، الماری کھلی کیوں ہے۔ جوناتھن کپڑے فرش پر کیوں پڑے ہیں۔ جوناتھن یہ دن کا وقت ہے، لائٹس آف کر دو۔ میرے اس روئیے پر میرا بوائے فرینڈ بہت کڑھتا رہتا ہے اور ہماری لڑائی بھی ہو جاتی ہے۔“ایک اور لڑکی نے بتایا کہ ”لاک ڈاﺅن کے تیسرے دن ہی میری اور میرے بوائے فرینڈ کی اس بات پر سخت لڑائی ہو گئی کہ میں نے اس کے پانی کے گلاس سے ایک گھونٹ پی لیا تھا۔ اس لڑائی کے بعد میں نے اسے گھر سے باہر نکال دیا اور کہا کہ آج رات تم باہر گاڑی میں سوﺅ گے۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے