کورونا وائرس کو 48 گھنٹوں میں ختم کرنے والی ویکسین تیار,کتنی ڈوز دی جائے تو وائرس کا مکمل خاتمہ ہوجاتا ہے؟ آسٹریلوی سائنسدانوں نے تہلکہ خیز دعویٰ کردیا  

کورونا وائرس کو 48 گھنٹوں میں ختم کرنے والی ویکسین تیار,کتنی ڈوز دی جائے تو وائرس کا مکمل خاتمہ ہوجاتا ہے؟ آسٹریلوی سائنسدانوں نے تہلکہ خیز دعویٰ کردیا  


کورونا وائرس کو 48 گھنٹوں میں ختم کرنے والی ویکسین تیار,کتنی ڈوز دی جائے تو …

سڈنی(ڈیلی پاکستان آن لائن)آسٹریلین سائنسدانوں نے ایسی دوا دریافت کرنے کا دعویٰ کیا ہے جس نے لیبارٹری میں 48 گھنٹے میں کورونا وائرس کو مار دیا۔

سائنسی جریدے جرنل اینٹی وائرل ریسرچ میں شائع تحقیق کے مطابق اینٹی پیراسیٹک دوا Ivermectin نئے نوول کورونا وائرس کی نقول بنانے کے عمل کو روک دیتی ہے۔

موناش یونیورسٹی کی تحقیقی ٹیم کی ڈاکٹر کائیلی واگسٹف نے بتایا کہ ہم نے یہ دریافت کیا کہ صرف ایک ڈوز سے بھی تمام وائرل ریبونیوکلورک ایسڈ (آر این اے) 48 گھنٹے میں ختم ہوجاتا ہے اور محض 24 گھنٹے میں ہی اس میں نمایاں کمی آجاتی ہے۔

ایکسپریس ٹربیون کے مطابق محققین کا کہنا ہے کہ ممکنہ طور پر اس کے اثر سے وائرس کے میزبان خلیات کا اثر کمزور ہوجاتا ہے۔

اسے لیبارٹری میں خلیات پر استعمال کیا گیا، فی الحال یہ کہنا مشکل ہے کہ یہ انسانوں میں انفیکشن کے خاتمے کے لیے کس حد تک موثر ہوسکتی ہے۔

اس دوا کا استعمال 1980 کی دہائی سے سر کی جوؤں، خارش اور پیراسائٹس یا طفیلی کیڑوں سے ہونے والے متعدد دیگر انفیکشنز کے علاج کے لیے ہورہا ہے. جلد کی بیماری rosacea کے علاج کے طور پر بھی استعمال کیا جاتا ہے۔

دنیا بھر میں سائنسدان کئی ادویات کو کووڈ 19 کے خلاف آزما رہے ہیں، جن میں ملیریا کی دوا کلوروکوئن، اینٹی وائرل ادویات لوپناویر، ریٹوناویر اور ریمڈیسیویر شامل ہیں، جو ایچ آئی وی اور ایبولا کے علاج کے لیے تیار کی گئی تھیں۔

 خیال رہے کہ دنیا بھر میں کورونا وائرس کے متاثرین کی تعداد 12 لاکھ ایک ہزار سے بڑھ گئی ہے جبکہ ہلاک ہونے والوں کی تعداد بھی 64500 سے زیادہ ہے۔ برطانیہ میں گذشتہ 24 گھنٹوں میں 700 سے زائد ہلاکتیں ہوئی ہیں جبکہ سپین میں لاک ڈاؤن میں 26 اپریل تک توسیع کردی گئی ہے۔

مزید : اہم خبریں /کورونا وائرس



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے