’کورونا وائرس کے 80 فیصد مریضوں کو یہ بیماری اُن لوگوں سے لگی جن میں علامات ظاہر نہیں ہورہی تھیں‘

’کورونا وائرس کے 80 فیصد مریضوں کو یہ بیماری اُن لوگوں سے لگی جن میں علامات ظاہر نہیں ہورہی تھیں‘


’کورونا وائرس کے 80 فیصد مریضوں کو یہ بیماری اُن لوگوں سے لگی جن میں علامات …

’کورونا وائرس کے 80 فیصد مریضوں کو یہ بیماری اُن لوگوں سے لگی جن میں علامات ظاہر نہیں ہورہی تھیں‘

  

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) چین کے شہر ووہان میں سائنسدانوں نے کورونا وائرس کے پھیلاﺅ پر ایک تحقیق کی ہے اور اس میں ایک پریشان کن انکشاف کیا ہے کہ ووہان میں کورونا وائرس کے 80فیصد مریضوں کو ایسے لوگوں سے وائرس منتقل ہوا جن میں اس کی علامات ظاہر نہیں ہو رہی تھیں۔ وہ لوگ خود بھی نہیں جانتے تھے کہ ان کے جسم میں وائرس موجود ہے اور اس لاعلمی میں وہ اسے دوسرے لوگوں میں منتقل کرتے رہے۔

شنگھائی جیاﺅ تونگ یونیورسٹی سکول آف میڈیسن کے سائنسدانوں نے اس تحقیق میں بتایا ہے کہ لوگ کورونا وائرس کی علامات ظاہر ہونے سے کم از کم 3.8دن پہلے دوسرے لوگوں میں وائرس منتقل کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ تب تک ان لوگوں کو خود بھی معلوم نہیں ہوتا کہ ان کے جسم میں وائرس پہنچ چکا ہے، چنانچہ وہ بے خوف ہوتے ہیں اور سب سے زیادہ ایسے لوگوں کی وجہ سے ہی وائرس پھیلتا ہے۔ ووہان میں سامنے آنے والے مریضوں میں سے 79.7فیصد میں ایسے ہی لوگوں سے وائرس منتقل ہوا۔ تحقیقاتی ٹیم کے سربراہ وئی تو ژینگ کا کہنا تھا کہ ”اس تحقیق سے ظاہر ہوتا ہے کہ ایسے لوگوں کو بھی سماجی میل جول میں اتنی ہی احتیاط کی ضرورت ہے جو بظاہر صحت مند ہیں۔ اگر ایسے لوگ محتاط ہو جائیں تو کورونا وائرس کے انسداد کی کوششیں کئی گنا زیادہ مو¿ثر ہو سکتی ہیں۔“

مزید : بین الاقوامی /کورونا وائرس



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے