گرمیوں میں کورونا وائرس کے پھیلنے کی رفتار کتنی کم ہوجائے گی؟ چینی ماہرین نے بڑا دعویٰ کردیا

گرمیوں میں کورونا وائرس کے پھیلنے کی رفتار کتنی کم ہوجائے گی؟ چینی ماہرین نے بڑا دعویٰ کردیا


گرمیوں میں کورونا وائرس کے پھیلنے کی رفتار کتنی کم ہوجائے گی؟ چینی ماہرین نے …

بیجنگ(مانیٹرنگ ڈیسک) امریکی صدر ڈونلڈٹرمپ اور وزیراعظم عمران خان کی طرف سے جب کہا گیا کہ موسم گرم ہونے پر کورونا وائرس ختم ہو جائے گا تو اس پر بہت لے دے ہوئی اور لوگوں نے عالمی ادارہ صحت کی ویب سائٹ کے سکرین شاٹس بھی شیئر کیے جن میں بتایا گیا تا کہ کورونا وائرس پر گرمی کازیادہ اثر نہیں ہوتا۔ تاہم اب چینی ماہرین نے صدر ٹرمپ اور وزیراعظم عمران خان کی بات جزوی طور پر درست قرار دے دی ہے۔ میل آن لائن کے مطابق چینی ماہرین نے نئی تحقیق میں بتایا ہے کہ درجہ حرارت اور ہوا میں نمی کے تناسب میں اضافے سے کورونا وائرس کا پھیلاﺅ کم ہو جاتا ہے۔

بی ہینگ یونیورسٹی اور تسنگ ہوا یونیورسٹی کے ماہرین نے اس تحقیق میں چین کے 100شہروں کے درجہ حرارت، ہوا میں نمی کے تناسب اور وہاں وائرس کے پھیلاﺅ کا تجزیہ کیا اور نتائج مرتب کیے۔ ان شہروں میں جیسے جیسے درجہ حرارت بڑھتا گیا، لوگوں کے متاثر ہونے کی شرح میں کمی آتی گئی۔ ابتداءمیں ان شہروں میں نئے لوگوں کے وائرس میں مبتلا ہونے کی شرح 2.5فیصد تھی جو اب 1.5رہ گئی ہے۔

ماہرین کا کہنا تھاکہ درجہ حرارت میں ہر ڈگری کے اضافے یا ہوا میں نمی کے تناسب میں ہر ایک فیصد اضافے سے کورونا وائرس کا پھیلاﺅ کم ہوتا ہے۔ درجہ حرارت یا نمی جتنی زیادہ ہوتی جائے گی وائرس کا پھیلاﺅ اتنا ہی کم ہوتا جائے گا تاہم ماہرین کا کہنا ہے کہ وائرس کا پھیلاﺅ درجہ حرارت اور نمی بڑھنے سے صرف کم ہو گا، وائرس یکسر ختم نہیں ہوگا۔

مزید : بین الاقوامی /تعلیم و صحت



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے