”ہمیں بھارت کے نخرے اٹھانے کی ضرورت نہیں“ چیئرمین احسان مانی نے شاندار اعلان کر دیا

”ہمیں بھارت کے نخرے اٹھانے کی ضرورت نہیں“ چیئرمین احسان مانی نے شاندار اعلان کر دیا


”ہمیں بھارت کے نخرے اٹھانے کی ضرورت نہیں“ چیئرمین احسان مانی نے شاندار …

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) نے بھارت کیساتھ کرکٹ کھیلنے سے متعلق دو ٹوک فیصلہ سنا دیا ہے اور چیئرمین احسان مانی نے کہا ہے کہ بھارت کے نخرے اٹھانے کی ضرورت نہیں ہے، پی سی بی نے بھارت کیساتھ سیریز کو پلان سے باہر سمجھ لیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین احسان مانی نے کہاکہ ہمیں یہ تسلیم کر لینا چاہئے کہ پڑوسی ملک کیخلاف سیریز نہیں ہو گی اور ہمیں ایسے ہی گزارہ کرنا ہو گا، ہم سیاست کو الگ رکھتے ہوئے کرکٹ کھیلنا چاہتے ہیں لیکن ماضی میں بار بار وعدہ خلافی کرنے والے بھارت پر بھروسہ نہیں کیا جا سکتا، ہم روایتی حریف کے خلاف کسی سیریز کو ذہن میں رکھے بغیر پلاننگ کریں گے، اگر میچز ہو جاتے ہیں تو اچھی بات ہے، نہ ہوں تب بھی ہماری حکمت عملی مکمل ہوگی۔

انہوں نے کہا کہ کورونا سے پیدا ہونے والی صورتحال میں دنیا بھر کی کرکٹ متاثر ہوئی ہے لیکن ہمیں فی الحال کوئی مالی مشکلات نہیں، ابھی 2،3 سال تک اخراجات برداشت کر سکتے ہیں تاہم سٹیڈیمز کی تزئین و آرائش سمیت ترقیاتی کاموں کا سلسلہ روکنا پڑے گا، ہمارے کمرشل کنٹریکٹ تقریباً ختم ہو چکے ہیں، نئے معاہدوں میں آمدنی کا سب سے بڑا ذریعہ پاکستان کی دوسرے ملکوں سے باہمی سیریز کے میڈیا رائٹس ہونگے۔

احسان مانی نے بتایا کہ 2023ءتک انگلینڈ، آسٹریلیا اور نیوزی لینڈ کو پاکستان میں کھیلنے کیلئے آنا ہے، جنوبی افریقہ کے خلاف میچز بھی ہیں، موجودہ صورتحال میں سب سے بڑا چیلنج اس کرکٹ کی مارکیٹنگ ہے، انگلینڈ کے براڈکاسٹر ابھی خود دباﺅ میں ہیں، ان پر آئندہ معاشی پریشر بھی بڑھے گا، ہو سکتا ہے کہ وہ پہلے جتنا سرمایہ نہ دے سکیں، اس لئے ہمیں متبادل ذرائع تلاش کرنا پڑیں گے، مرکزی سپانسر ادارے کے ساتھ معاہدہ بھی ختم ہو رہا ہے، اگرچہ 19 سال کا ساتھ ہے لیکن ان کو بھی کوئی ایسی یقین دہانی چاہیے کہ کرکٹ کب شروع ہوگی۔

ایک سوال پر احسان مانی نے کہاکہ ملک کے انٹرنیشنل یا ڈومیسٹک کرکٹرز ہوں سب ہمارے سٹیک ہولڈر ہیں، ممکنہ مالی مشکلات کے باوجود ہم انہیں پہلی ترجیح سمجھتے ہیں اور مفادات کا تحفظ کریں گے، تنخواہوں میں کوئی غیر معمولی کٹوتی نہیں کی جائے گی، نئے کنٹریکٹ پالیسی کے مطابق دئیے جائیں گے،اگر سلیکٹرز کسی کی کیٹیگری میں تنزلی یا باہر کرنے کا فیصلہ کرتے ہیں تو یہ ان کی صوابدید ہوگی، ہمارا سٹاف کی چھانٹی یا تنخواہوں میں کمی کا بھی کوئی ارادہ نہیں، سابق کرکٹرز کو پینشن دینے سمیت ہر ممکن مدد کرتے رہے ہیں، اب بھی پیچھے نہیں ہٹیں گے، پی سی بی کے اخراجات میں کمی ضرور کرنا ہوگی، اس کیلئے مناسب طریقہ کار اختیار کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ کورونا وائرس کی وجہ سے آئی سی سی ٹیسٹ چیمپئن شپ بھی بری طرح متاثر ہوئی، ہمارا بنگلہ دیش کے خلاف کراچی میں میچ اور دیگر کئی ملکوں کی سیریز ملتوی ہوئیں، آئی سی سی میٹنگز میں ہمارا موقف یہی رہا ہے کہ ٹیسٹ چیمپئن شپ کو مکمل کرنے اور سب کو برابر مواقع دینے کیلئے اگر شیڈول میں توسیع کی ضرورت ہو تو کرلینا چاہیے۔

مزید : کھیل



جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے